counter easy hit

پی ٹی آئی کب اور کیسے حریم زادی بنی ؟

کراچی(ویب ڈیسک )پاکستان پیپلز پارٹی کے رہنما اور صوبائی وزیراطلاعات ومحنت سندھ سعید غنی نے کہا ہے کہیہ ٹاک ٹاک حکومت ہے اور ٹک ٹاک کے ذریعے ہی گرے گی، شہریار آفریدی نے کہا تھا فوٹیج اور ویڈیو میں فرق ہوتا ہے وہ بہتر بتائنگے کہ حریم اور ترمیم میں کیا فرق ہے۔نجی ٹی وی کے مطابق پاکستان

حیران کن خبر : وہ غذا کسے کھانے سے مردوں میں نسوانی صفات پیدا ہو جاتی ہیں؟ ایک تحقیق نے پوری دنیا کو حیران کر دیا

 

پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما اور صوبائی وزیر سعید غنی کا کہنا تھا کہ نااہل وزراء کا کام ہی یہ ہوتا ہے کہ ویڈیو بناؤ اور وائرل کرو، یہ ٹک ٹاک حکومت ہے اور ٹک ٹاک کے ذریعے ہی گرے گی، وفاقی وزراء کا کام روزانہ ایک ٹک ٹاک بنانا اور شام کو 50 ہزار لائیک ہونے پر جشن منانا ہے،شہر یار آفریدی سے ہی پوچھا جائے کہ حریم اور ترمیم میں کیا فرق ہے؟کیونکہ شہریار آفریدی نے کہا تھا فوٹیج اور ویڈیو میں فرق ہوتا ہے وہ بہتر بتائنگے کہ حریم اور ترمیم میں کیا فرق ہے؟۔سعید غنی نے کہا کہ بینظیرانکم سپورٹ پروگرام کے آٹھ لاکھ مستحقین کی جگہ پی ٹی آئی اپنے حمایتیوں کے نام شامل کرنا چاہتی ہے احتجاج کریں گے۔اُنہوں نے کہا کہ سندھ حکومت کی تعلیمی پالیسی بہت واضح ہے،آئندہ کچھ سال میں کالجز کی صورتحال مزید بہتر ہو جائے گی،ٹیچرز کا پڑھائے بغیر پرموشن مانگنا مناسب نہیں،بہتر نتائج آنے پر اساتذہ کو لازمی پرموشن ملے گی۔ جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق مسلم لیگ ن کے رہنماخواجہ آصف نے کہاہے کہ میرے خلاف باتیں ہورہی ہیں اورمیں ان کا سامنا کرتا ہوں، بل کی غیرمشروط حمایت کافیصلہ لندن میں ہوا تھا مریم نواز سے مشاورت کے معاملہ پر بات نہیں کرناچاہتا ، عوامی رائے ہمارے خلاف ہے ،لوگ کیا سوچتے ہیں ،اس سے غافل ہوجائیں توسیاست ختم ہوجائیگی۔اے آروائی نیوز کے پروگرام میں گفتگوکرتے ہوئے خواجہ آصف نے کہا کہ کبھی بھی پارٹی کی رائے کیخلاف کوئی کام نہیں کیا ، پارٹی نے جو فیصلہ کیا ، اس کے ساتھ کھڑا ہوں۔پارٹی سربراہ کے حکم کی تعمیل کی ہے ، اس کے ساتھ کھڑا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ پارٹی ڈسپلن کی پابندی کی اور فیصلے پر کوئی افسوس نہیں ہے ، میں یہ نہیں جانتا کہ پالیسی کب بنی ، ہمیں صرف پیغام دیاگیا ،میں تفصیل میں نہیں جانا چاہتا کہ کس نے مخالفت کی اور کس نے حمایت کی، مایوسی اوراختلاف کے باوجود قیادت کا فیصلہ مانا گیا ؟انہوں نے کہاکہ جو پارٹی پر تنقید کررہے تھے ، وہ پانامہ کے وقت نواز شریف کے خلاف تھے،پارٹی میں ہمارے اختلافات موجودہیں اور میں ان سے انکار نہیں کررہا۔خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ پرویز رشید کاکام ان کا اور پارٹی قیادت کامعاملہ ہے ۔ سیاسی کارکن کے طور پردیکھیں تو عوامی رائے ہمارے خلاف ہے ،لوگ کیا سوچتے ہیں ،اس سے غافل ہوجائیں توسیاست ختم ہوجائیگی۔ میں نے پارٹی سربراہ کے حکم کی تعمیل کی ہے اوراس کے ساتھ کھڑا ہوں۔میرے خلاف باتیں ہورہی ہیں اورمیں ان کا سامنا کرتا ہوں، بل کی غیرمشروط حمایت کافیصلہ لندن میں ہواتھا مریم نواز سے مشاورت کے معاملہ پر بات نہیں کرناچاہتا ۔

HOW, PTI, TARGETED, BY, HAREEM SHAH

About MH Kazmi

Journalism is not something we are earning, it is the treasure that we have to save for our generations. Strong believer of constructive role of Journalism in future world.

Connect

Follow on Twitter Connect on Facebook View all Posts Visit Website