counter easy hit

نوازشریف کی امریکی و برطانوی اسٹیبلشمنٹ سے ملاتیں۔۔۔ (ن) لیگ رہنما نے اپنے ہی قائد کا پول کھول دیا، متوالے سر پکڑ کر بیٹھ گئے

اسلام آباد (ویب ڈیسک) پاکستان مسلم لیگ نواز کے سینئر رہنما اور سابق وزیر قانون پنجاب رانا ثنا اللہ نے چار مارچ کو سابق وزیراعظم نواز شریف کی امریکی اور برطانوی اسٹیبلشمنٹ سے مبینہ ملاقات سے متعلق کہا ہے کہ وہ ان ملاقاتوں کی تردید نہیں کریں گے ۔ اسلام آباد ہائیکورٹ آمد پر میڈیا سے گفتگو کے دوران ایک صحافی نے ان سے مبینہ ملاقات کے حوالے سے سوال کیا جس کے جواب میں ن لیگی رہنما نے کہا کہ میں ان ملاقاتوں کی تردید نہیں کروں گا لیکن اس پر تبصرہ کرنے کی پوزیشن میں اس لیے نہیں کہ پارٹی کی طرف سے اجازت نہیں ۔انہوں نے کہا کہ قائد حزب اختلاف اور پارٹی صدر شہباز شریف کا مارچ کے مہینے میں وطن واپسی کا ارادہ ہے جبکہ نوازشریف دل کے آپریشن کے بعد فوری وطن واپس آجائیں گے۔ رانا ثنا اللہ نے کہا کہ مسلم لیگ ن نے کسی قومی حکومت کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کیا ہے، اس کے بجائے ان کی پارٹی وسط مدتی انتخابات چاہتی ہے.انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن احتجاج کے لئے ہر فورم کا انتخاب کرے گی جبکہ نواز شریف کی ضمانت میں توسیع کے لیے قانونی ٹیم کی مشاورت جاری ہے.سینئر ن لیگی رہنما نے معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات فردوس عاشق اعوان کو ’باجی بدزبان‘ قرار دے دیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ان ملاقاتوں کی تردید نہیں کروں گا لیکن اس پر تبصرہ کرنے کی پوزیشن میں اس لیے نہیں کہ پارٹی کی طرف سے اجازت نہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کا مارچ کے مہینے میں وطن واپسی کا ارادہ ہے۔ جب کہ نواز شریف دل کے آپریشن کے فوری بعد واپس آ جائیں گے۔انہوں نے مزید کہا مسلم لیگ نواز نے کسی قومی حکومت کا حصہ نہ بننے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس کے بجائے پارٹی وسط مدتی انتخابات چاہتی ہے۔رانا ثناءاللہ نے معاون خصوصی فردوس عاشق اعوان کو باجی بدزبان قتررار دے دیا۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن احتجاج کے لیے ہر فورم کا انتخاب کرے گی جب کہ نواز شریف کی ضمانت میں توسیع کے لیے قانونی ٹیم کی مشاورت جاری ہے۔جب کہ دوسری جانب وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے احتساب و داخلہ امور بیرسٹر شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ نواز شریف عدالت کے حکم اور اجازت سے علاج کیلئے بیرون ملک گئے تھے، حکومت نے انسانی ہمدردی کی بنیادوں پر انہیں بیرون ملک علاج کا موقع فراہم کیا تھا لیکن چار ماہ گزرنے کے باوجود وہ کسی ہسپتال میں داخل نہیں ہوئے، ہم نے برطانوی حکومت کو لیٹر کے ذریعے آگاہ کر دیا ہے کہ پنجاب حکومت نے ان کی ضمانت ختم کر دی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر نواز شریف واپس نہ آئے تو باضابطہ طور پر برطانوی حکومت کو ان کی حوالگی کے بارے لیٹر لکھا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت کرپشن کے خلاف کام کر رہی ہے۔

NAWAZ SHAREIF MEETING TO AMERICAN AND BRITAIN ESTABLISHMENT, PMLN LEADER ADMITTED

About MH Kazmi

Journalism is not something we are earning, it is the treasure that we have to save for our generations. Strong believer of constructive role of Journalism in future world.

Connect

Follow on Twitter Connect on Facebook View all Posts Visit Website